اگلے 12 گھنٹوں میں بجلی مکمل بحال ہو جائے گی، خرم دستگیر


وفاقی وزیر توانائی خرم دستگیر—فائل فوٹو

وفاقی وزیر توانائی خرم دستگیر نے کہا ہے کہ 12 گھنٹوں میں ملک بھر میں بجلی مکمل طور پر بحال ہو جائے گی، کوئی بڑا فالٹ نہیں آیا۔

جیو نیوز کے پروگرام جیو پاکستان میں بات کرتے ہوئےخرم دستگیر نے کہا کہ موسم سرما میں بجلی کی طلب کم ہوتی ہے اس لیے سسٹم کو رات کے وقت زیادہ تر بند کر دیا جاتا ہے اور صبح دوبارہ آن کیا جاتا ہے۔

خرم دستگیر کا کہنا ہے کہ آج صبح 7 بجے کے قریب جب سسٹم کو آن کیا جا رہا تھا تو اس دوران جامشورو اور دادو کے درمیان فریکوئنسی کی کمی کی وجہ سے بجلی کا بریک ڈاؤن ہوا۔

انہوں نے کہاکہ ایک محتاط اندازے کے مطابق اگلے 12 گھنٹوں میں بجلی کی فراہمی مکمل طور پر بحال ہو جائے گی، کوشش ہے اس سے پہلے ہی بجلی کی مکمل بحالی ہو جائے۔

وفاقی وزیر کا مزید کہنا ہےکہ بریک ڈاؤن شمال سے جنوب تک آیا ہے اور ہم آہستہ آہستہ جنوب سے شمال کی طرف سسٹم بحال کر رہے، تربیلا اور وارسک سے کچھ سسٹم بحال کرنا شروع کر دیے ہیں۔

ان کا یہ بھی کہنا ہےکہ کراچی شہر کا معاملہ تھوڑا سا پیچیدہ ہے، کراچی میں کے الیکٹرک کا اپنا سسٹم بھی موجود ہے لیکن شہرکو نیشنل گرڈ سے جو 1100 میگا واٹ بجلی فراہم کی جاتی ہے وہ چند گھنٹوں میں بحال ہو جائے گی۔

واضح رہے کہ بجلی کا بڑا بریک ڈاؤن ہونے کی وجہ سے ملک کے مختلف علاقوں میں بجلی کی فراہمی معطل ہوگئی ہے۔

ذرائع نیشنل پاور کنٹرول کے مطابق، اس وقت سسٹم مکمل طور پر بند ہے، مین لائینوں میں فالٹ کی وجہ سے پورا سسٹم بیٹھ گیا ہے۔

ذرائع کا کہنا ہے کہ ابھی بجلی کے بریک ڈاون کی وجہ جاننے کی کوشش کی جارہی ہے، بحالی میں کئی گھنٹے لگ سکتے ہیں۔


شاید آپ یہ بھی پسند کریں