صحافی نے شاہ رخ کے تاخیر سے آنے پر کیا کہا تھا؟



بالی ووڈ کے کنگ خان، شاہ رخ خان نے ایک بار فلم ’جب تک ہے جان‘ کی پروموشن کے دوران پیش آنے والے ایک واقعہ کا ذکر کیا تھا۔

ایک پرانے انٹرویو میں شاہ رخ خان نے ایک صحافی کے غیر دوستانہ رویے پر گفتگو کرتے ہوئے کہا تھا کہ اس کے ساتھ ان کے دوستانہ تعلقات رہے تھے لیکن وہ اس کے بعد بھی انھیں ہدف بناتا رہا۔

شاہ رخ نے بتایا کہ فلم کی پوری ٹیم دو گھنٹے لیٹ تھی، مذکورہ صحافی نے انھیں ٹوئٹ کیا کہ ان کا اپنے بارے میں کیا خیال ہے۔

2013 کے فلم فیئر کے موقع پر دیئے گئے اس انٹرویو میں شاہ رخ نے مزید کہا تھا کہ آج جب میں اپنے ڈاکٹر کے پاس تھا تو انھوں نے اس حیرت انگیز چیز کے بارے میں کہا کہ مسئلہ یہ ہے مسٹر خان لوگ آپ سے اس قدر پیار کرتے ہیں کہ آپ جو کچھ کرتے ہیں وہ اسے ذاتی طور پر لیتے ہیں۔

شاہ رخ کے مطابق اگر میں عطیات نہ دوں تو لوگ کہتے ہیں کہ یہ عطیات نہیں دیتے حالانکہ انھیں دینا چاہیے۔

شاہ رخ نے مذکورہ بالا صحافی کے بارے میں مزید کہا کہ، جب تک ہے جان کی پروموشن کے دوران جب کترینہ کیف نے انگریزی میں گفتگو کی تو اس نے نہایت ہی غیر دوستانہ انداز میں کہا کہ یہ ہندی انٹرویو ہے، جب انٹرویو ختم ہوا تو میں اس پر ہنسا۔

اسکے فوری بعد اس نے ٹوئٹ کیا کہ شاہ رخ خان خود کو کیا سمجھتے ہیں کہ انھوں نے مجھے دو گھنٹے تک انتظار کرایا، لیکن یہ تو کترینہ، انوشکا شرما اور یش راج فلمز سب کرتے ہیں، صرف میرے بارے میں ایسا کیوں کہا گیا کہ میں انتظار کراتا ہوں۔ کیا مجھے اپنے معیار کو کچھ نیچے لانا ہوگا۔

واضح رہے کہ مذکورہ بالا فلم جوکہ 2012 میں ریلیز ہوئی اس میں شاہ رخ کے علاوہ کترینہ کیف اور انوشکا شرما بھی تھیں اور فلم میں شاہ رخ نے ایک بم ڈسپوزل ماہر کا کردار ادا کیا تھا۔



شاید آپ یہ بھی پسند کریں