سنجے مشرا نے فلمی دنیا چھوڑنے کا فیصلہ کیوں کیا تھا؟



کامیڈی کرداروں سے مشہور اداکار سنجے مشرا نے کچھ عرصے قبل اپنے بالی ووڈ کیریئر کو ختم کرنے کی وجہ بتادی۔ 

ایک انٹرویو کے دوران سنجے مشرا کا کہنا تھا کہ ان کے والد کی موت کا ان پر گہرا اثر ہوا جس کے بعد انہوں نے یہ سب کچھ چھوڑنے کا فیصلہ کیا تھا۔ 

سنجے مشرا نے اپنی زندگی کے اس وقت کو یاد کرتے ہوئے کہا کہ انہوں نے ممبئی اس لیے چھوڑ دیا تھا کیونکہ ان کی طبعیت خراب تھی اور ان کے معدے میں انفیکشن تھا۔ 

سنجے نے کہا کہ میں بستر مرگ پر تھا، کچھ روز والد کا ساتھ رہا اور پھر ان کی اچانک موت ہوگئی، ان کا جانا مجھے توڑ گیا۔ 

ان کا کہنا تھا کہ والد کی آخری رسومات ادا کرنے کے بعد میں نے والدہ سے کہا کہ وہ کہیں جانا چاہتے ہیں، انہیں ایسا لگتا تھا کہ وہ واپس ممبئی نہیں آئیں گے۔ 

اداکار نے کہا کہ ’جب یہی زندگی ہے، کیوں نہ اوپر والے کی چیزوں کو دیکھا جائے، جس دنیا میں اس نے بھیجا؟ اس لیے میں دیکھتا ہوں پہاڑوں میں کہیں کچھ۔‘

انہوں نے بتایا کہ وہ گنگوتری گئے، راستے میں انہوں نے ایک عمر رسیدہ شخص کے ساتھ سڑک پر موجود ایک ڈھابے پر کام کیا، وہاں نوڈلز اور اوملیٹ بنائے۔ 

انہوں نے بتایا کہ وہاں سے گزرنے والے لوگ مجھے پہچان لیا کرتے تھےکہ میں وہی اداکار ہوں جو ’گول مال‘ میں دکھائی دے رہا ہوں۔ 

سنجے کی والدہ نے ان کی اس وقت میں کافی مدد کی اور اسی دوران انہیں فلم ساز روہیت شیٹی کے دفتر سے کال آئی اور انہیں فلم ’آل دا بیسٹ‘ میں کردار کی پیشکش کی گئی۔ 

واضح رہے کہ سنجے نے اس فلم میں آر جی وی کا کردار نبھایا جسے کافی پذیرائی ملی تھی۔ 

مذکورہ فلم میں اجے دیوگن، سنجے دت، فردین خان، بپاشا باسو، جونی لیور اور مگدا گوڈسے مرکزی کرداروں میں نظر آئے۔ 

اس فلم کے بعد سے سنجے مشرا نے کئی بالی ووڈ فلموں میں کام کیا اور جہاں مداحوں کی جانب سے ان کے کام کو سراہا گیا۔



شاید آپ یہ بھی پسند کریں